Survey finds majority of journalists in the Arab world don’t use RTI/sunshine laws

0
823 views

 

By Rana Tanveer

One can’t blame governments once there are Right to Information (RTI) or Freedom of Information (FOI) laws in place but journalists don’t exercise these laws to get hold of official information and data. Thanks to technology and initiatives like ‘open government’, data regime is growing and strengthening rapidly world over including in developing countries like Pakistan. The amount of data being generated and collected today is unprecedented and this is for sure good news for journalists.

A recent survey of the Arab world conducted by the Arab Data Journalists Network (ADJN) has highlighted the same problem i.e., journalists are not benefiting from the RTI or sunshine laws. There could be no better evidence except credible and authentic data and the same could be used by journalists to produce more engaging and more powerful stories. All we need is to exercise the RTI laws more and more.

According to the ADJN survey, almost 72 percent of journalists in the Arab world find it hard to find and get hold of official data and at the same time 83 percent of the journalists responded that they never used the RTI laws.

It is pertinent to mention here that a 2016 survey conducted by Data Stories on data journalism landscape in Pakistan had found the similar problem. The survey had found that over 97 percent of journalists in Pakistan believed official data was not easily available in the country. And almost 76 percent of the responders had admitted that they had never used the country’s RTI laws.

 

“If journalists don’t ask for data, they won’t get it. If they ask for it and actually get it, they will help in making this data available, journalists shouldn’t wait until the data is released, they should work for it,” says Eva Constantaras—an investigative data journalist and consultant specialized in data journalism projects.

As many as 60 people from Egypt, Morocco, Jordan, Tunisia, Iraq, Syria, Lebanon and Amman had participated in the ADJN’s survey.

Eva along with Amr Eleraqi—a data journalist, and a trainer specialized in data journalism and data visualization—launched the survey report in Egypt recently.

If you face any problem in viewing this report, you can download full report from the download link mentioned below.

 

 

اگر ڈیٹا تک رسائی کے قوانین موجود ہوں اورصحافی ان قوانین سے فائدہ نہ اٹھائیں تو حکومتوں کو موردالزام نہیں ٹہرایا جاسکتا۔

پاکستان جیسے ترقی پذیر ممالک میں بھی ڈیٹا کا نظام نہ صرف پھل پھول رہا ہے بلکہ مظبوط بھی ہورہاہے ،جس کیلیے ہم ٹیکنالوجی اور اوپن گورنمنٹ جیسے اقدامات
کے شکر گزار ہیں۔ڈیٹا کی لامحدود مقدار جو روزانہ کی بنیاد پر حاصل ہوتی ہے،نہ صرف بے مثال ہے ،بلکہ صحافی برادری کیلیے خوثخبری سے کم نہیں ہے۔

عرب ڈیٹا جر نسلٹس نیٹورک(اے ڈی جے این) نے حال ہی میں ایک سروے کیا ہے، سروے کے مطابق عرب دنیا میں صحافی برادری معلومات تک رسائی کے قوانین با الفاظ دیگر سن شائن لاء سے فائدہ نہیں اٹھارہی۔ قابل اعتماد معلومات اور مستند اعدادوشمار ہی وہ بہترین ثبوت ہوتا ہے جو کسی بھی بہترین سٹوری کیلیے نہایت
ضروری ہوتا ہے۔اعدادوشمار، اورمعلومات تک رسائی کیلیے صحافی کو رائٹ ٹو انفرمیشن ایکٹ سے ضرور فائدہ حاصل کر نا چاہیے۔

اے ڈی جے این سروے کے مطابق عرب دنیا میں بہتر فیصد صحافیوں کو سرکاری معلومات تک رسائی میں شدید مشکلات ہیں اور ساتھ ہی تراسی فیصد صحافیوں کا یہ کہنا ہے کہ انھوں نے معلومات تک رسائی کے قوانین کا کبھی استعمال نہیں کیا ۔قابل ذکر بات یہ ہے کہ ڈیٹا سٹوریز ویب سائٹ ٹیم نے دو ہزارسولہ میں ڈیٹاجرنلزم لینڈاسکیپ ان پاکستان نامی سروے میں انھی مسائل کو رپورٹ کیا تھا کہ ستانوے فیصد صحافیوں کا اس بات پر یقین ہے کہ پاکستان میں سرکاری معلومات تک رسائی بہت مشکل ہے ،اور چھئتر فیصد صحافیوں نے کبھی معلومات تک رسائی کے قوانین کا استعمال نہیں کیا مصر،مراکو، اردن، تیونس ، عراق، شام اور اومان سے ساٹھ لوگوں نے اے ڈی جے این سروے میں حصہ لیا۔ایوا اور امرالعراقی جو کہ نہ صرف ڈیٹا جرنلسٹس ہیں بلکہ ڈیٹا منظر کشی کی ٹریننگ بھی دیتے ہیں۔ انہی مذکورہ
صحافیوں نے حال ہی میں سروے رپورٹ کو مصر میں شائع کیاہے۔

اگر آپ کو یہ رپورٹ دیکھنے میں دقت کا سامنا ہے،تو آپ اوپر دیے گئے لنک پر کلک کرے اور رپورٹ ڈوان لوڈ بھی کرسکتے ہیں۔

LEAVE A REPLY